اب مارس پراگائی جا ئیں گی سبزیاں

اب مارس پراگائی جا ئیں گی سبزیاں

فرانس سے تعلق رکھنے والے 6 طلبہ نے ہفتے کے روز سے زندگی کے ایک نئے تجربے کا آغاز کیا ہے۔ اس تجربے کے دوران مذکورہ افراد کرہ ارض سے کوچ کیے بغیر مریخ پر چلے پھریں گے اور مخلتف سرگرمیاں انجام دیں گے۔

فرانس کے ایک عربی زبان کے بین الاقوامی ریڈیو چینل Radio Monte-Carlo کے مطابق درحقیقت یہ طلبہ 3 ہفتے امریکا کے صحراء 'یوٹا' میں گزا ریں گے جہاں کا قطعہ ارض قدرتی خصوصیات کے لحاظ سے بڑی حد تک مریخ سیارے کی اراضی سے ملتا جلتا ہے۔ یہ افراد ایک خلائی اسٹیشن میں قیام کریں گے جو اُس خلائی گاڑی جیسا ہوگا جسے امریکی خلائی ایجنسی 2030 میں مریخ بھیجنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

طلبہ کے وفد میں شامل ہر رکن سائنس کے شعبے میں خصوصی مہارت رکھتا ہے جو تین ہفتوں تک جاری رہنے والے مشترکہ تجربات میں بہت فائدے مند ثابت ہو گی۔ ان افراد کو ایسے سخت حالات میں مل کر کام کرنا ہوگا جو انہیں مریخ کے سفر کی دشواریوں کو یاد دلا دیں گے۔ ان آزمائشوں میں انتہائی چھوٹے حجم کی تجربہ گاہ کو چلانا اور ایک خصوصی باغیچے میں سبزیوں کی کاشت شامل ہے۔

امریکی خلائی ایجنسی نے ان چھ فرانسیسی طلبہ کا انتخاب طلبہ کی ایک بڑی تعداد میں سے کیا ہے جو مختلف ملکوں میں خلائی شعبے کے اندر اعلی تعلیم حاصل کر رہے ہیں۔ یہ فرانسیسی طلبہ اس وقت ٹولوز شہر میں واقع ہوابازی اور خلانوردی کے علوم کے اعلی فرانسیسی انسٹی ٹیوٹ میں زیر تعلیم ہیں۔
صحرائے یوٹا میں فرانسیسی طلبہ کے وفد کی تربیت کی نگرانی دو دیگر فرانسیسی ماہرین کریں گے جو فروری 2016 میں اسی جیسے ایک تربیتی کورس میں شرکت کر چکے ہیں۔